کیوں لہو لہو ہے پاکستان؟

جب سے مستونگ واقعہ کی خبر سنی ہے طبیعت خراب ہو گی ہے، سر درد سے پھٹ رہا ہے، کیا یہ وہی پاکستان ہے جس کے لیے میرے آباو اجداد نے قربانیاں دی تھیں۔ 

یہ میرے ملک میں کیا ہورہا ہے جس شہر کو دیکھو وہاں خون ہی خون ہے ،بے گناہ خون ہر شہر کی سڑکوں پہ بہایا جا رہا ہے ۔

میری اقتدار کے بھوکے اور اقتدار کے نشے نشے میں انسانیت کا سبق بھول جانے والوں سے بس اتنی سی التجاء ہے خدارا اگر ہماری حفاظت نہیں کر سکتے تو کم سے کم میرے ملک کی جڑیں کھوکھلی کرنے میں دشمن کی مدد تو نہ کرو۔آخر کب تک میرے پیارے ملک میں ،کبھی مذہب ،تو کبھی زبان کے نام پہ قتل و غارت گری کا کاروبار کر کے اپنی سیاست چمکاتے رہو گئے۔ 

قاتلو ظالمو بتاو میرے ملک کو چھوڑنے کے لیے کتنا مال و دولت لو گئے کتنی معصوم جانوں کی قربانیاں لو گئے ایک بار ہی لے لو پر خدا کے لیے میرے ملک کے عوام پہ رحم کرو تھوڑی غیرت کرو ، پر تم میں غیرت کہاں تم تو چند ڈالروں کی خاطر قوم کی بیٹی اور بیٹوں کو غیروں کے آگئے بیچ دیتے ہو غیرت تو ان میں ہوتی ہے جن کا قبلہ آج بھی کعبہ شریف ہے تمھارا قبلہ تو وائٹ ہاوس ہے اور یہ مذہب کے ٹھیکے دار بتائیں کہاں اسلام کہہ رہا ہے کہ اگر تم سنی ہو تو شیعوں کو مارو اور اگر شیعہ ہو تو سنیوں کو مارو ، بلوچ ہو تو پنجابی ، سندھی تیرے دشمن ، اگر سندھی ہو تو مہاجر ، پٹھان تیرے دشمن، ہم سب ہی ایک دوسرے کے دشمن ہیں پھر اصلی دشمن تو ہماری کمزوری کا فائدہ اٹھاے گا ۔ 

کہتے ہیں کے بلوچستان کے حالات خراب کرنے میں غیر ملکی ہاتھ شامل ہے آخر وہ کون سا غائبی ہاتھ ہے جو نظر نہیں آرہا خیر نظر تو آرہا ہے لیکن اس غائبی ہاتھوں نےحکمرانوں کی آنکھوں پہ مال و دولت کی پتی باندھ دی ہے جو اس کو دیکھتے ہوئے بھی اندھے بن جاتے ہیں ۔

پتا نہیں میرے ملک کے حکمرانوں کو کب ہوش آئے گا کب اس قابل ہوں گے کہ قاتلوں کا ہاتھ پکڑ کر عوام کے خون بہانے سے روک سکیں ۔ یہ کیا ہو رہا ہے میرے ملک میں کبھی تو فیکٹریوں میں غریبوں کو زندہ جلایا جا رہا ہے تو کبھی یوں روڈ کے اوپر ان کو دھماکوں میں اڑایا جا رہا ہے ۔

حکمرانوں آپ کو خدا کا کوئی خوف نہیں تو یاد رکھو جس دن میرے ملک کے مظلوم عوام جاگ اٹھے تو پھر ہر بندہ ممتاز قادری ہی بنے گا اس وقت کے آنے سے پہلے آج سے ہی مظلوم عوام کے قاتلوں کو چوراہوں پہ سر عام لٹکانا شروع کر دو ورنہ تو پھر جو ہو گا وہ تمھارے حق میں تو کبھی بھی اچھا نہیں ہوگا۔
مجھے اس وقت کچھ سمجھ نہیں آرہا ڈپریشن میں کیا لکھ گیا ہوں اگر کچھ غلط لکھ گیا ہوں تو مظلوم عوام سے معذرت پر قاتلوں اور ظالموں سے ہر گز نہیں ۔
از محمدیاسرعلی

<<< پچھلا صفحہ

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔


اپنی قیمتی رائے سے آگاہ کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

میرا خواب، پیار، امن، مساوات اور انسانیت کا ترجمان نفرت، دہشتگردی، طبقاتی تفریق اور فرقہ پرستی سے پاک پاکستان " محمد یاسرعلی "

www.yasirnama.blogspot.com. Powered by Blogger.